403 Forbidden


openresty
مزاح – زندگی کا ایک رنگ » لطیفوں کی دنیا

مزاح – زندگی کا ایک رنگ


1

 

زندگی میں اگرمزاح نہ ہوتوکیا ہوِ؟ جب ہم کسی سے بات چیت کرتے ہیں تو ہم گفتگو کا مزا کیسے لے سکتے ہیں اگراس میں مزاح کا کوئی پہلو ہی نہ ہو؟ اورہم اپنی اداسی کا کس طرح علاج کرتے ہیں؟ یہ وہ سوالات ہیں جن کے جوابات ہمیں پتا ہونے چاہیئں لیکن کیا ہم یہ جوابات جانتے ہیں؟ آئیے ذرااسکی تفصیل میں جاتے ہیں۔

مزاح کے ذریعے ہم زندگی میں روشنی کے رنگ بھرتے ہیں ہم لوگوں میں مشترک چیزیں ڈھونڈ کے ان سے بات چیت کرنے میں کہ ان سے کیا کہا جائے یا کس طرح ان کی مدد کی جائے ان کے ساتھ صحت مند تعلقات بناتے ہیں ان سب باتوں میں جوچیز ہماری گفتگو میں رکاوٹ اور پھیکا پن پیدا کرتی ہے وہ مزاح کا ناپید ہونا ہے۔ اکثراوقات جب ہم مزاح کوبڑھاوادیتے ہیں تو ہم ان مقامات پرپہنچ جاتے ہیں جوغیریقینی کے کنارے پرہوتے ہیں مگر جب مزاح کامیاب ہوجائے تو ہم آپس میں اعتماد اور تعاون کے رشتے کی تعمیر کرتے ہیں یوں ہمیں احساس ہوتا ہے کہ ہم اکیلے نہیں ہیں ہم میں اپنی غلطیوں کوماننا آجاتا ہے ہم دوسروں میں اور خود میں اچھائیاں دیکھنے لگتے ہیں یہی وجہ ہے کہ ہم ایک دوسرے کے ساتھ کے لئے کوشش کرتے ہیں ہم مشترک چیزوں کو اہمیت دیتے ہیں۔ اور اسکے برعکس اگرہم میں مزاح کا عنصرسرے سے نہ ہوتوعام طورسے ہمارا مزاج تنقیدی یا دفاعی ہوتا ہے یا پھر ہم خود کو یا کسی کو کسی بات کا مورد الزام ٹھہراتے ہیں۔

مزاح پیدا کرنا ایک خاص ہنرہے جس میں کچھ لوگ ہی ماہرہوتے ہیں جس کے ذریعے سے بغیر کسی کے لئے تنقید یا دفاع کا پہلولائے کچھ خاص االفاظ کا چناؤ کیا جاتا ہے تاکہ اس کے ذریعے سے لوگوں کی توجہ بھی حاصل ہوسکے اورصحیح نقطہ نظر بھی واضح ہوسکے۔ مزاح ایک ایسا ہنرہے جس کے ذریعے سے آپ لوگوں کے درمیان میں جیسا رہنا چاہتے ہیں رہ سکتے ہیں چاہے وہ توجہ پانا ہو یا شرم و خاموشی ہو۔ مزاح پیدا کرنے کے لئے دراصل ایک چیلنج سے گزرنا ہڑتا ہے کہ اسے بات چیت میں کیسے اور کب شامل کیا جائےاورکب اس سے بچا جائے۔ اکثراوقات بہت زیادہ یا ہر وقت کا مزاح لوگوں کو اشتعال دلانے کے لئے کافی ہوتا ہے۔ ایسا مزاح جواحساس سے عاری ہواکثردوسروں کو چپ کروا دیتا ہے یا بحث براۓ بحث کو دعوت دیتا ہے لیکن جب ہم صحت مند مزاح کو برقراررکھتے ہیں توہم خود میں اوردوسروں اچھائی دیکھتے ہیں اگر ہم مؤثر طریقے سے بولیں اورصاف طور سے سننے کی عادت ڈالیں تو ہمارے مزاح کو بھی سراہا جا سکتا ہے۔

آپ نے شاید کبھی غورکیا ہوکہ کامیاب افراد زیادہ ترخود عاجزی والے ہوتے ہیں اسی لئے وہ خود اپنی ہی ذات کومزاح کا نشانہ بناتے ہیں کیونکہ وہ یہ جانتے ہیں کہ ہر انسان میں خوبیاں اور خامیاں ہوتی ہیں اسی لئے اپنی ذات کی اہمیت کو کم نہ کرتے ہوئے بھی مزاح کے ذریعے اسے کم اہمیت کا حامل بتانے سے دوسروں میں خود اعتمادی اور برابری کا تصور ابھرتا ہے۔ یہ بھی ایک وجہ ہے کہ مزاح کے باعث ہمیں اپنا نقطہ نظر برقرار رکھ کر دوسروں کوجواب دینے اور اختلافات کو ختم کرنے میں مدد ملتی ہے۔

ایسے معاملات میں جہاں آپ کسی بات پر کسی کے ساتھ متفق نہیں ہیں اور اگر ایسے میں آپ کوکوئی مزاحیہ بات نہیں سوجھتی ہے تو آپ ان کی بات کوواضح کرکے ان کو ان ہی کہی گئی بات سمجھا سکتے ہیں یوں بغیر کسی بحث کے بات کو نمٹایا جا سکتا ہے بحث سے بچنے کے لئے یہ یاد رکھیں کہ ہمیشہ مزاح ہی بہترانتخاب نہیں ہوسکتا۔ 

زندگی کے ہرموڑ پرمزاحیہ باتوں کو شامل کرنے کے مواقع ہر وقت میسرآسکتے ہیں یہ آپ پر منحصر ہے کہ آپ اسے کس طرح زندگی کے ان مرحلوں میں شامل کرتے ہیں۔ کہتے ہیں کہ ہر انسان کے اندرایک بچہ ہوتا ہے مزاح کا کافی حصہ ہمارے اندرکے اسی بچے کی وجہ سے ابھرتا ہے جسے ہم زندگی کی تلخیوں میں سلانے کو ترجیح دے کرخود ہی اپنی زندگی کو مزید مشکل بناتے ہیں۔ کافی حد تک اس بچے کو جگانے کے لئے کوئی مضحکہ خیز آواز، یا حلیہ یا پھرکوئی کھلونا کافی ہوتا ہے اسی لئے اس کا رسک لیں زندگی میں مزاح کو شامل کرکے تھوڑا مزا خود بھی حاصل کریں اور دسروں کو بھی محظوظ کریں تاکہ یہ آپ کی زندگی کو خوشگوار بنا کر صحیح راستے کا تعین کر دے۔

 


Like it? Share with your friends!

1

What's Your Reaction?

hate hate
0
hate
confused confused
0
confused
fail fail
0
fail
fun fun
2
fun
geeky geeky
0
geeky
love love
0
love
lol lol
0
lol
omg omg
0
omg
win win
0
win

0 Comments

Your email address will not be published. Required fields are marked *

لطیفوں کی دنیا